December 12, 2018

ناپاک حالت میں پانی میں ہاتھ ڈالنا ؟

ناپاک حالت میں پانی میں ہاتھ ڈالنا ؟

 سوال: السلام علیکم مفتی صاحب،

اگر نا پاک حالت میں پانی میں ہاتھ ڈالنے سے کیا پانی نا پاک ہوگا ؟

           (شیخ محمد فرید)،

جواب: وعلیکم السلام و رحمۃاللہ،

اگر کوئی ناپاکی حالت میں غٖسل سے پہلے پانی،برتن،بالٹی وغیرہ میں ہاتھ ڈالے جبکہ اس پر کوئی ناپاک چیز نہ لگی ہوئی ہو تو ایسی صورت میں پانی ناپاک نہیں ہوتاہے،کیونکہ حدیث پاک میں آیا ہیکہ :

حضرت میمونہ رضی اللہ عنھا فرماتی ہیں کہ جب رسول اکرمﷺ غسل جنابت فرماتے تو اپنا بایاں ہاتھ مبارک پانی میں ڈالتے اور پانی لے کر سیدھے ہاتھ مبارک کو دھوتے،پھر دائیں ہاتھ کو پانی میں ڈال کر پانی لیکر بائیں ہاتھ کو دھوتے،اورپھر سارے بدن پر پانی بہاتے۔ (صحیح مسلم،ج/3،ص/188،ح/317)،

تو اس حدیث سے معلوم ہواکہ حالت جنابت میں اگر ناپاک چیز کے بغیر ہاتھ پانی میں ڈالے تو پانی نا پاک نہیں ہوتا ہے۔اگرصرف ہاتھ ڈالنے سے ہی نا پاکی کا حکم لگادیں تو اس سے امت پر حرج ہوجائیگا۔