December 12, 2018

دراسة الکتب السیرۃ النبویة علی اختلاف اسالیبھا و منا ھجھا عبر التاریخ

دراسة الکتب السیرۃ النبویة علی اختلاف اسالیبھا و منا ھجھا عبر التاریخ

(بزبان عربی)

ان ھذا الموضوع لھا اھمیۃ عظمیٰ مکانۃ کبریٰ فی الدراسات الاسلامیۃ لان کل علم و فن یزداد عظمۃ و مکانۃ بسبب ضرورۃموضوعہ واھمیتہ وان ھذا لموضوع یتعلق بسیرۃ النبویة علی صا حبھا افضل الصلاۃ والسلام وھو تسیر سیرۃ عملیة لکتاب اللہ العزیز،فالقرآن صامت فالسیرۃ ناطقة،والکتاب متن فالسیرۃ شارحة والقرآن مجمل فالسیرۃ مفصلة ۔

 

فقد اعتنت الامۃ الاسلامیۃ بنحو السیرۃ البویۃ ولم یأل جھدا فی سبیل حفاظ کل عمل و قول وحرکۃ وسکون صدر من النبی ﷺ ووضعوا ماقتھم کلھا لیجمعوا جمیع جوانب حیاۃ رسول اللہ ﷺ من اعمالہ و صفاتہ وشمائلہ حتی تکلت جھودھم وأثمرت مساعیھم۔وھٰذہ میزۃ ممتازۃلھذہ الامۃ الاسلامیۃ تتمتاز بین امم أخری حیث لا یوجد فی الکوکب الارضی امۃ سالفۃ ولا حاضرۃ اھتمت بسیرۃ النبویۃﷺ اؤ مصلحھاکما اھتمت الامۃ الاسلامیۃ اھتماما بالغا تجاہ سیرۃ نبیھا وکتبوا مؤلفات جمۃ ومجلدات ضخمۃ فی ھذا الموضوع۔

واھل العلم ما بین ناظم و ناشر،موسع و مختصر،شارح و محشی،لکن الھدف واحد وان تنوعت الاسالیب والمناھیج،اٌلا وھوعرض سیرۃ المصطفیﷺ وتبیان ما کان علیہ من الخلق العظیم ورحمۃ للعالمین،

واول من اھتم بکتابۃ السیرۃ النبویۃ ھو عروۃابن الزبیر،وانہ روی  الکثیر من الاخبار النبویۃ والاحادیث الشریفۃ عن النبیﷺ ثم  ابان بن عثمان بن عفان الف فی السیرۃ صحفا جمۃ جمع فیھا احادیث  حیاۃ الرسولﷺ ثم وھب بن منبہ الیمنی قد ظھر فی مدینۃ ھیدالبرج بألمانیا قطعۃ نادرۃ

من کتابہ الذی الفہ فی المغازی ،وغیر ھٰؤلاء کثیرمنھم من قضی نحبہ قرب تمام الربع الاول من القرن الثانی کشرحبیل بن سعد وابن شھاب الزھری وعاصم بن عمربن قتادۃوعبداللہ ابن بکررضی اللہ عنھم اجمعین،وکان ھؤلاء الاربعۃ البررۃ ممن اعتنوا بأخبارالمغازی وما یتصل بھا۔

وکان منھم ابن اسحاق من بین اعلام القرن الثانی المتوفی سنۃ احدی وخمسین ومائۃ وکان لہ العلم الواسع وقد الف کتابا بدیعا فی سیرۃ سید الناس وسماھا ‘‘ بسیرۃ ابن اسحاق’’ وانھا مقسمۃ الی ثلثۃاجزاء

الجزء الاول :فی المبدأ،

الجزء الثانی: فی المبعث

الجزء الثالث: فی المغازی،

اما المبدأ فیتناول التاریخ الجاھلی والمبعث النبوی فیشمل حیاۃ النبیﷺ فی مکۃ المکرمۃ و نری الؤلف فیہ یصدر الاخبار الفردیۃ بموجز حاوٍلھا،والمغازی یشمل حیاۃ النبیﷺ فی المدینۃ المنورۃ وجری فیہ عل اؐن یبدأ الخبر بموجز حاوٍلمحتویاتہ ثم یتبعہ بخبر من جمیع الاقوال التی أخذھا من رواتہ ثم یکملہ بما جمع فی نفسہ من المصادر العلمیۃ و یلتزم ایراد المسانید المختلفۃ والترتیب الزمن۔

ثم قیض اللہ تعالی لھذا المجھود رجلا عبقریا وأعطاہ شأنا غریبا ھو ابن ھشام الحمیری ؒالمتوفی سنۃ ثمان عشر ومأتین جمع ھٰذہ السیرۃ فدونھا وھذبھا وکان لہ فیھا قلم لم ینقطع عن تعقب ابن اسحاق فی الکثیر مما اورد بالتحریروالنقد والاختصار أوبذکرروایۃ أخری فاتھا ابن اسحاق ذکرھا ھذا الی تکملۃ أضا فھا وأخبار أتی بھا،

وانہ بدأ ھذا الکتاب بذکر اسماعیل بن ابراھیم ومن ولد رسول اللہ ﷺ من ولدہ واولادھم لأٓصلابھم من اسماعیل الی رسول اللہ ﷺ وترک بعض ما یذکرہ ابن اسحاق ؒ فی ھٰذا الکتاب مما لیس لرسول اللہ فیہ ذکر،ولا تزال فیہ من القرآن شیئ۔

فقد عنی صاحبہ فیہ بحشد الاٰثار وتمحیض الاسانید،وتسجیل ما دقّ وجلّ  من الوقائع الھامۃ والشئون الخاصۃ بالنبیﷺ وھو من امھات المراجع فی ھذا الفن لا یستغںی عنہ باعث۔

ثم اعتنی بہ المتأخرون فشرح الامام ابو القاسم عبد الرحمٰن السھیلی ؒغریب السیر وسماہ ‘‘ الروضۃ الاٌنف’’ وھو کتاب مفید معتبر وشرح الامام العلامۃ بدرالدین محمد بن احمد العینی الحنفیؒ قطعۃ کبیرۃ منھا کشف الثام فی سیرۃ ابن ھشامؒ۔ (کشف الظنون عن اسامی الکتب والفنون،ج2،ص1012)

ومنھم الامام العلامۃ الشیخ محمد بن یوسف الدمشقی الصالحیؒ الّف کتاباً فی السیرۃ وسماہ‘‘سبل الھدی والرشاد فی خیر العباد’’ وھو احسن کتاب من کتب المتأخرین و ابسطھا فی السیرۃ النبویۃ ﷺ وقد انتخب ھذا الکتاب  من  اکثر من ثلثما ئۃکتاب وقد ذکر الفوائد الجمۃ بالعجب العجاب وقد زادت ابوابہ علی سبعما ئۃ باب۔(کشف الظنون عن اسامی الکتب والفنون،ج2،ص978)۔

ومنھم الامام العالم العلامۃ والبحرالفھامۃ علی بن برھان الدین الحلبی الشافعیؒ الف کتابا فی السیرۃ الاحمدیۃ وسماہ السیرۃ الحلبیۃ ولخّصھا من السیرۃ من السابقتین سیرۃ الزھری و سیرۃ الشامی فی نموذجا لطیفا یروق للاحداق ویحلو الاذواق،یقراٗ مع ما ضمّہ الیہ بین یدی المشائخ الکرام علی غایۃ الانسجام ونھایۃ الانتظام۔

(السیرۃ الحلبیۃ،ج1،ص2)

ومن کتب السیرۃ النبویۃ‘‘ کتاب الشفاءبتعریف حقوق المصطفی’’ للامام الھمام والبحرالقمقام القاضی ابی الفضل عیاض بن عمررضی اللہ عنھما المتوفی سنۃ اربعۃ و اربعین وخمسما ئۃ الّف کتابا جامعًا وھو عظیم النفع،کثیر الفائدۃ لم یؤلّف مثلہ فی التاریخ وقد درج تبویبہ مھد تاٗصیلہ وخلص تفصیلہ وانتحی حصرہ وتحصیلہ ۔ (الشفاء فی تعریف حقوق المصطفیٰ ،ص/5)۔

ومنھا خلاصۃ سیر سید البشر للشیخ ابی العیاض محب الدین عبد اللہ الطبری الشافعیؒ المتوفی اربعۃ وتسعین و ستما ئۃ الّف کتابا فی السیرۃ مختصرًا جامعا جی ھذا الموضوع للبحث والتحقیق،ملخصا من اثنی عشر مؤلفا ما بین صغیر و کبیر،ومرتبا علی اربعۃ و عشرین فصلاً و خالیاً عن الحشو والزوائد۔

وان اوفی کتاب فی ھذا الموضوع ھو کتاب‘‘ زاد المعاد فی ھدی خیرالعباد ’’ للحافظ ابی عبد اللہ اب القیم الجوزیؒ المتوفی سنۃ احدی و خمسین وسبعما ئۃ قد الف کتابہ ھذا فی حال السفر ولم تکن فی حوذتہ المصادر التی ینقل منھا ما یحتاج الیھا من الخبر والأثرما یتعلق بموضوض ھذا الکتاب مع انہ ضمن معظم الاحادیث النبویۃالقولیۃ،والفعلیۃ المتعلقۃ بہ ﷺ مما ھو منثور فی الصحاح والسنن والمسانید والسیر۔

ومنھا کتاب ‘‘ الوفاءبأحوال المصطفی’’ للشیخ علی بن جوزیؒ فھو بحق کتاب جامع شامل للسیرۃ الاحمدیۃ فقد ابدع الامام فیہ واشارالی مرتبتہﷺ وشرح حالہ من بدایتہ وادرج الأدلۃ علی صحۃرسالتہ وتقدمہ علی جمیع الأنبیاءفی رتبتہ فاذا انتھی الامر الی مدفنہ فی ترتبہ،ذکر فی فضل الصلاۃ علیہ،وعرض اعمال امتہ و کیفیۃ بعثہ وموقع شفاعتہ واخبر بقربہ من الخالف یوم القیامۃ و منزلتہ ۔

ثم اعتنی بھذا المجال المتأخرون من العجم فی اللغۃ الاردویۃ علی اختلاف اسالیبھم ومناھجھم وان العنایۃ بالسیرۃ النبویۃ والاھتمام بھا قد تناولتہ الامۃ الاسلامیۃ من اول قرنھا الی یومنا ھذا فی اللغۃ العربیۃ،والانکلیزیۃ فقط بل فی کثیر من اللغات العالمیۃ۔

ألا ایھا الناس ! لو لم تدرکھا الامۃ الاسلامیۃ لادرکتھا العنایۃ الربانیۃ ولو لم یکتب احد من ھذہ الامۃ  علی ھذا الموضوع لکانت سیرتہ حیۃ طالعۃ کالشمس فی رابغۃ النھار لان اللہ تعالی ھو الذی جمع سیرۃ حبیبہ ﷺ صفی اللہ فی القرآن الکریم،فالقرآن اول کتاب فی سیرۃ المصطفیﷺَ۔